پايگاه اطلاع رساني دفتر آيت الله العظمي شاهرودي دام ظله
ArticleID PicAddress Subject Date
{ArticleID}
{Header}
{Subject}

{Comment}

 {StringDate}
Saturday 17 November 2018 - السبت 07 ربيع الأول 1440 - شنبه 26 8 1397
 
 
 
 
  • احکام مسجد  
  • Sendtofriend
  •  
  •  
  • مسئلہ٢٠٠:مسجد کی زمین اور اس کے اندر اور باہر کی چھت اور اندر کی دیوار کا نجس کرنا حرام ہے اور جس کو بھی نجس ہونے کا علم ہو جاۓ تو فوراً اسے پاک کرے اور احتیاط واجب یہ ہے کہ مسجد کی بیر ونی دیوار کو بھی نجس نہ کرے اور اگر نجس ہو جاۓ تو پاک کرے۔

    مسئلہ٢٠١:أئِمہ علیہم السّلام کے حرم کو نجس کرنا حرام ہے اور اگر کسی امام علیہ السّلام کا حرم نجس ہو جاۓ اور اسکی وجہ سے بے حرمتی ہو رہی ہو تو اس کا پاک کرنا واجب ہے اور احتیاط مستحب کی بنا پر اگر بے حرمتی بھی نہ ہو تو پھر بھی پاک کرنا چاہیۓ۔

    مسئلہ٢٠٢:اگر مسجد کی چٹائ نجس ہو جاۓ تو اسے پاک کرنا چاہیۓ لیکن اگر پاک کرنے میں خراب ہو جانے کا خوف ہو اور نجس حصّے کو کاٹ کر نکال دینا بہتر ہو تو کاٹ کر نکال دے۔

    مسئلہ٢٠٣:اگر مسجد میں مجلس کے لۓ پردہ لگایا جاۓ، فرش کیا جاۓ یا سیاہ چادر لگائ جاۓ اور چٹائ کا سامان لے جایا جاۓ تو اگر ان کاموں سے مسجد کو نقصان نہ پہنچتا ہو اور نماز پڑھنے میں مانع نہ ہوں تو کوئ حرج نہیں۔

    مسئلہ٢٠٤:مسجد میں سونا اگر انسان مجبور نہ ہو اور دنیاوی امور سے متعلّق گفتگو کرنا یا کسی صفت میں مشغول ہو نا یا ایسے اشعار پڑھنا جو نصیحت اور موعظہ سے خالی ہوں مکروہ ہے اور اسی طرح منھ، ناک اور سینے کی رطوبت کا ڈالنا، گمشدہ چیز کا اعلان کرنا، آواز بلند کرنا بھی مکروہ ہے۔لیکن آذان کے لۓ آواز بلند کرنے میں کوئ حرج نہیں ہے۔

     
     
  • RelatedArticle
  •  
     
     
     
     

    The Al-ul-Mortaza Religious Communication Center, Opposite of Holy Shrine, Qom, IRAN
    Phone: 0098 251 7730490 - 7744327 , Fax: 0098 251 7741170
    Contact Us : info @ shahroudi.net
    Copyright : 2000 - 2011